مواد فوراً دِکھائیں

اِمدادی کارروائیاں—‏محبت کا ثبوت

اِمدادی کارروائیاں—‏محبت کا ثبوت

یہوواہ کے گواہ ضرورت کے وقت اپنے ہم ایمانوں اور دوسرے لوگوں کی مدد کرتے ہیں۔‏ اِس طرح وہ ظاہر کرتے ہیں کہ وہ دوسروں سے محبت کرتے ہیں جو سچے مسیحیوں کی پہچان ہے۔‏—‏یوحنا 13:‏35‏۔‏

جب کسی علا‌قے میں کوئی آفت آتی ہے تو یہوواہ کے گواہوں کی برانچیں اِمدادی کمیٹیاں بناتی ہیں جو متاثرین کی مدد کے لیے اِنتظامات کرتی ہیں۔‏ مقامی کلیسیائیں (‏یعنی جماعتیں)‏ بھی اِن کمیٹیوں کا ہاتھ بٹاتی ہیں۔‏ یہوواہ کے گواہ نہ صرف متاثرین کی مالی مدد کرتے ہیں بلکہ اُنہیں پاک کلام سے تسلی بھی دیتے ہیں۔‏ اِس مضمون میں 2011ء کے وسط سے 2012ء کے وسط تک ہونے والی اِمدادی کارروائیوں کے بارے میں بتایا گیا ہے۔‏

جاپان:‏ 11 مارچ 2011ء کو شمالی جاپان میں شدید زلزلے کے نتیجے میں سونامی آیا جس سے ہزاروں لوگ متاثر ہوئے۔‏ پوری دُنیا سے یہوواہ کے گواہوں نے عطیات اور اِمداد بھیجی اور اِمدادی کارروائیوں میں حصہ لینے کے لیے بہت سے رضاکار بھی وہاں پہنچے۔‏

برازیل:‏ سیلا‌ب آنے اور مٹی کے تودے گِرنے کی وجہ سے سینکڑوں لوگ مارے گئے۔‏ یہوواہ کے گواہوں نے متاثرہ علا‌قوں میں پانی کی 20 ہزار بوتلیں،‏ 42 ٹن خوراک،‏ 10 ٹن کپڑے،‏ 5 ٹن صفائی کا سامان اور دوائیاں وغیرہ بھیجیں۔‏

کانگو(‏برازاویل)‏:‏ دھماکہ خیز مواد پھٹنے سے 4 یہوواہ کے گواہوں کے گھر بالکل تباہ ہو گئے اور 28 گواہوں کے گھروں کو نقصان پہنچا۔‏ متاثرہ یہوواہ کے گواہوں کو خوراک اور کپڑے مہیا کیے گئے اور مقامی گواہوں نے اُن کو اپنے گھروں میں ٹھہرایا۔‏

کانگو(‏کنشاسا)‏:‏ شدید بارشوں کے نتیجے میں سیلا‌ب آیا جس کے متاثرین کو کپڑے فراہم کیے گئے۔‏ اِس کے علا‌وہ ہیضے کی وبا سے متاثرہ لوگوں کے لیے دوائیاں مہیا کی گئیں۔‏ پناہ گزین کیمپوں میں رہنے والوں کے لیے دوائیاں،‏ فصل اُگانے کے لیے بیج اور کئی ٹن کپڑے بھیجے گئے۔‏

وینزویلا:‏ شدید بارشوں کی وجہ سے سیلا‌ب آئے اور مٹی کے تودے گِرے۔‏ اِمدادی کمیٹیوں نے 288 یہوواہ کے گواہوں کی مدد کی اور 50 سے زیادہ نئے گھر بنائے۔‏ اِن کمیٹیوں نے اُن لوگوں کی بھی مدد کی جن کے گھروں کو جھیل ویلنسیا میں پانی کی سطح بلند ہونے کی وجہ سے خطرہ تھا۔‏

فلپائن:‏ سمندری طوفانوں کی وجہ سے سیلا‌ب آئے۔‏ برانچ نے متاثرین کے لیے خوراک اور کپڑے بھیجے اور مقامی یہوواہ کے گواہوں نے پانی اُترنے کے بعد صفائی ستھرائی کے کام میں ہاتھ بٹایا۔‏

کینیڈا:‏ صوبے البرٹا میں آگ لگنے سے قصبہ سلیو لیک بہت متاثر ہوا۔‏ پورے ملک سے یہوواہ کے گواہوں نے وہاں کی کلیسیا کو بہت زیادہ عطیات بھیجے تاکہ صفائی کے کام میں مدد ہو سکے۔‏ لیکن کلیسیا کو سارے عطیات کی ضرورت نہیں تھی اِس لیے آدھی سے زیادہ رقم دوسرے ملکوں میں آفتوں سے متاثرہ لوگوں کی مدد کے لیے بھیج دی گئی۔‏

آئیوری کوسٹ:‏ جنگ سے پہلے،‏ جنگ کے دوران اور جنگ کے بعد متاثرین کو ضروری چیزیں،‏ رہائش اور دوائیاں فراہم کی گئیں۔‏

فیجی:‏ شدید بارشوں اور سیلا‌ب کی وجہ سے یہوواہ کے گواہوں کے 192 خاندانوں کے کھیت تباہ ہو گئے اور اُن کی خوراک اور آمدنی کا کوئی ذریعہ نہ رہا۔‏ اُن سب کے لیے خوراک کا اِنتظام کِیا گیا۔‏

گھانا:‏ ملک کے مشرقی علا‌قے میں سیلا‌ب کے متاثرین کو خوراک اور بیج فراہم کیے گئے اور اُن کے لیے رہائش کا اِنتظام کِیا گیا۔‏

ریاستہائے متحدہ امریکہ:‏ شدید آندھیوں اور طوفانوں کی وجہ سے تین ریاستوں میں یہوواہ کے گواہوں کے 66 گھروں کو نقصان پہنچا اور 12 گھر بالکل تباہ ہو گئے۔‏ حالانکہ زیادہ تر مالک مکا‌نوں نے بیمہ پالیسی کرا رکھی تھی لیکن پھر بھی تعمیر اور مرمت کے کام کے لیے اُن کی مدد کی گئی۔‏

ارجنٹائن:‏ یہوواہ کے گواہوں کی کلیسیاؤں نے ملک کے جنوبی علا‌قے میں اُن لوگوں کی مدد کی جن کے گھر آتش فشاں پہاڑ سے نکلنے والی راکھ سے متاثر ہوئے۔‏

موزمبیق:‏ قحط سالی سے متاثرہ 1000 سے زیادہ لوگوں کے لیے خوراک کا بندوبست کِیا گیا۔‏

نائیجیریا:‏ 24 یہوواہ کے گواہوں کو جو بس کے ایک سنگین حادثے میں زخمی ہوئے،‏ مالی مدد فراہم کی گئی۔‏ ملک کے شمالی علا‌قوں میں اُن لوگوں کی بھی مدد کی گئی جو نسلی اور مذہبی فسادات کی وجہ سے بےگھر ہو گئے۔‏

بینن:‏ سیلا‌ب سے متاثرہ لوگوں کے لیے دوائیاں،‏ کپڑے،‏ مچھردانیاں،‏ پانی اور رہائش مہیا کی گئی۔‏

ڈومینیکن ریپبلک:‏ سمندری طوفان آئرین کے بعد مقامی کلیسیاؤں نے گھروں کی مرمت میں مدد کی اور دوسری چیزیں بھی فراہم کیں۔‏

ایتھیوپیا:‏ دو علا‌قوں میں قحط سالی اور ایک علا‌قے میں سیلا‌ب سے متاثرہ لوگوں کی ضروریات پوری کرنے کے لیے رقم مہیا کی گئی۔‏

کینیا:‏ قحط سالی سے متاثرہ لوگوں کی مدد کے لیے عطیات فراہم کیے گئے۔‏

ملا‌وی:‏ ایک پناہ گزین کیمپ میں رہنے والوں کی مدد کی گئی۔‏

نیپال:‏ مٹی کے تودے گِرنے سے یہوواہ کی ایک گواہ کا گھر تباہ ہو گیا۔‏ اُس کے لیے عارضی رہائش گاہ فراہم کی گئی اور مقامی کلیسیا نے اُس کی مدد کی۔‏

پاپوا نیوگنی:‏ شدت پسندوں نے یہوواہ کے گواہوں کے آٹھ گھر جلا دیے۔‏ اِن گھروں کو دوبارہ بنانے کے لیے اِنتظامات کیے گئے۔‏

رومانیہ:‏ سیلا‌ب کے نتیجے میں کچھ یہوواہ کے گواہ بےگھر ہو گئے۔‏ اُن کے گھر دوبارہ بنانے کا بندوبست کِیا گیا۔‏

مالی:‏ قحط سالی کی وجہ سے زیادہ فصلیں نہیں ہوئیں اِس لیے پڑوسی ملک سینیگا‌ل سے اُن لوگوں کے لیے اِمداد بھیجی گئی جنہیں خوراک کی قلت کا سامنا تھا۔‏

سیرا لیون:‏ جنگ سے متاثرہ علا‌قوں میں رہنے والے یہوواہ کے گواہوں کا علا‌ج کرنے کے لیے فرانس سے ڈاکٹر آئے جو خود بھی یہوواہ کے گواہ تھے۔‏

تھائی لینڈ:‏ خطرناک سیلا‌بوں نے کئی صوبوں میں تباہی مچائی۔‏ اِمدادی ٹیموں نے 100 گھروں اور 6 عبادت گاہوں کی مرمت اور صفائی کا کام کِیا۔‏

چیک ریپبلک:‏ سیلا‌ب کی وجہ سے کئی گھروں کو نقصان پہنچا۔‏ پڑوسی ملک سلواکیہ کے یہوواہ کے گواہوں نے اِمداد فراہم کی۔‏

سری لنکا:‏ سونامی کے بعد ہونے والی اِمدادی کارروائیاں بڑی حد تک مکمل ہو چکی ہیں۔‏

سوڈان:‏ ملک میں جاری خانہ جنگی کی وجہ سے بےگھر ہونے والے یہوواہ کے گواہوں کو خوراک،‏ کپڑے،‏ جُوتے اور پلا‌سٹک کی شیٹیں بھیجی گئیں۔‏

تنزانیہ:‏ شدید سیلا‌ب کی وجہ سے 14 خاندانوں کا کافی نقصان ہوا۔‏ اُس علا‌قے کی کلیسیاؤں نے کپڑے اور گھریلو اِستعمال کی چیزیں بھیجیں۔‏ اِس کے علا‌وہ ایک گھر کو دوبارہ سے تعمیر بھی کِیا گیا۔‏

زمبابوے:‏ قحط کی وجہ سے ایک علا‌قے کے لوگ بہت متاثر ہوئے۔‏ اُن کی مدد کے لیے خوراک اور پیسے بھیجے گئے۔‏

بُرونڈی:‏ پناہ گزینوں کو دوائیاں اور اِمداد فراہم کی گئی۔‏