مواد فوراً دِکھائیں

کیا یہوواہ کے گواہ مانتے ہیں کہ خدا نے کائنات کو چھ دن میں خلق کِیا؟‏

کیا یہوواہ کے گواہ مانتے ہیں کہ خدا نے کائنات کو چھ دن میں خلق کِیا؟‏

ہم یہ ضرور مانتے ہیں کہ خدا نے زمین کی سب چیزوں کو چھ دن میں خلق کِیا۔‏ لیکن ہم یہ نہیں مانتے کہ یہ چھ دن چوبیس چوبیس گھنٹے کے تھے۔‏ ہم یہ بھی نہیں مانتے کہ کائنات بس چند ہزار سال پُرانی ہے جیسا کہ کچھ لوگوں کا خیال ہے۔‏ اِس کی کیا وجہ ہے؟‏

  1. کتابِ مُقدس میں لکھا ہے کہ خدا نے زمین کی تمام چیزوں کو چھ دن میں خلق کِیا۔‏ لیکن اِس میں یہ نہیں لکھا کہ یہ 24 گھنٹے کے دن تھے۔‏ دراصل کتابِ مُقدس میں لفظ ”‏دن“‏ ایک چھوٹے یا لمبے عرصے کی طرف اِشارہ کر سکتا ہے۔‏ (‏زبور 90:‏4‏)‏ مثال کے طور پر اِس میں تخلیق کے سارے عرصے کو ایک دن کہا گیا ہے۔‏—‏پیدایش 2:‏4‏۔‏

  2. کتابِ مُقدس کے مطابق خدا نے کائنات کو اُن چھ دن سے پہلے بنایا جن میں اُس نے زمین کی ساری چیزیں بنائیں۔‏ (‏پیدایش 1:‏1‏)‏ اِس لیے ہم اُن سائنس دانوں سے متفق ہیں جنہوں نے تحقیق سے دریافت کِیا کہ زمین اربوں سال پُرانی ہے۔‏

ہم سائنس کے خلاف نہیں ہیں کیونکہ ہم مانتے ہیں کہ کتابِ مُقدس اور سائنسی حقائق آپس میں میل کھاتے ہیں۔‏