مواد فوراً دِکھائیں

مضامین کی فہرست فوراً دِکھائیں

 باب 7

نجومیوں کی یسوع سے ملاقات

نجومیوں کی یسوع سے ملاقات

متی 2:‏1-‏12

  • نجومی ستارے کی رہنمائی میں پہلے یروشلیم آئے اور پھر یسوع کے پاس گئے

مشرق سے کچھ آدمی آئے۔‏ وہ نجومی تھے۔‏ یہ ایسے آدمی تھے جن کا دعویٰ تھا کہ وہ ستاروں کی چال سے اِنسانوں کی زندگی میں ہونے والے واقعات کی پیش‌گوئی کر سکتے ہیں۔‏ (‏یسعیاہ 47:‏13‏)‏ جب وہ مشرق میں تھے تو اُنہیں ایک ستارہ دِکھائی دیا اور وہ اِس کی رہنمائی میں سینکڑوں میل کا فاصلہ طے کر کے یروشلیم آئے۔‏

وہاں پہنچ کر نجومیوں نے پوچھا:‏ ”‏وہ بچہ کہاں ہے جو یہودیوں کا بادشاہ ہے؟‏ جب ہم مشرق میں تھے تو ہم نے اُس کا ستارہ دیکھا اور ہم اُس کی تعظیم کرنے آئے ہیں۔‏“‏—‏متی 2:‏1،‏ 2‏۔‏

یہ سُن کر بادشاہ ہیرودیس بہت گھبرا گیا۔‏ اُس نے اعلیٰ کاہنوں اور شریعت کے عالموں کو بلوا کر اُن سے پوچھا کہ ”‏مسیح کو کہاں پیدا ہونا تھا؟‏“‏ اُن لوگوں نے پاک صحیفوں کی بِنا پر جواب دیا:‏ ”‏بیت‌لحم میں۔‏“‏ (‏متی 2:‏5؛‏ میکاہ 5:‏2‏)‏ اِس پر بادشاہ ہیرودیس نے چپکے سے اُن نجومیوں کو بلوایا اور اُن سے کہا:‏ ”‏جاؤ،‏ بچے کو ڈھونڈو اور جب وہ تمہیں مل جائے تو واپس آ کر مجھے بتانا تاکہ مَیں بھی جا کر اُس کی تعظیم کروں۔‏“‏ (‏متی 2:‏8‏)‏ مگر اصل میں بادشاہ ہیرودیس بچے کو اِس لیے ڈھونڈنا چاہتا تھا تاکہ وہ اُسے مار ڈالے۔‏

جب نجومی یروشلیم سے روانہ ہوئے تو ایک حیرت‌انگیز بات ہوئی۔‏ اُنہوں نے مشرق میں جو ستارہ دیکھا تھا،‏ وہ اُن کے آگے آگے چلنے لگا۔‏ اِس سے ظاہر ہوا کہ یہ کوئی عام ستارہ نہیں تھا بلکہ اُن کی رہنمائی کرنے کے لیے بھیجا گیا تھا۔‏ یہ ستارہ نجومیوں کو سیدھا اُس گھر تک لے گیا جہاں یوسف اور مریم اپنے بیٹے یسوع کے ساتھ رہ رہے تھے۔‏

جب نجومی گھر میں داخل ہوئے تو وہ مریم اور چھوٹے یسوع سے ملے۔‏ اُنہوں نے جھک کر یسوع کی تعظیم کی اور اُنہیں تحفے کے طور پر سونا،‏ لوبان اور مُر دیا‏۔‏ اِس کے بعد وہ بادشاہ ہیرودیس کے پاس لوٹنے کے لیے روانہ ہوئے لیکن خدا نے اُن کو خواب میں ہیرودیس کے پاس جانے سے منع کر دیا۔‏ اِس لیے وہ آدمی دوسرے راستے سے اپنے ملک لوٹ گئے۔‏

آپ کے خیال میں اُس ستارے کو کس نے بھیجا تھا؟‏ یاد کریں کہ وہ ستارہ نجومیوں کو سیدھا بیت‌لحم نہیں لے گیا جہاں یسوع رہ رہے تھے بلکہ وہ اُنہیں یروشلیم لے کر گیا جہاں اُن کی ملاقات بادشاہ ہیرودیس سے ہوئی جو یسوع کو مار ڈالنا چاہتا تھا۔‏ اگر خدا نجومیوں کو ہیرودیس کے پاس واپس جانے سے منع نہ کرتا تو یسوع کو ضرور مار ڈالا جاتا۔‏ اِس سے ظاہر ہوتا ہے کہ اِس ستارے کو خدا کے دُشمن شیطان نے بھیجا تھا کیونکہ وہ خدا کے بیٹے کو مار ڈالنا چاہتا تھا۔‏