مواد فوراً دِکھائیں

مضامین کی فہرست فوراً دِکھائیں

 باب 57

ایک لڑکی اور بہرے آدمی کی شفایابی

ایک لڑکی اور بہرے آدمی کی شفایابی

متی 15:‏21-‏31 مرقس 7:‏24-‏37

  • یسوع مسیح نے ایک فینیکی عورت کی بیٹی کو شفا دی

  • اُنہوں نے ایک بہرے اور توتلے آدمی کو شفا دی

فریسیوں کی روایتوں کا پردہ فاش کرنے کے بعد یسوع مسیح اپنے شاگردوں کے ساتھ وہاں سے چلے گئے۔‏ وہ فینیکے کے علاقے میں صور اور صیدا کے شہروں کی طرف گئے جو کفرنحوم سے بہت میل دُور تھے۔‏

وہاں پہنچ کر یسوع مسیح ایک گھر میں رُکے۔‏ وہ نہیں چاہتے تھے کہ لوگوں کو پتہ چلے کہ وہ اُن کے علاقے میں ہیں لیکن پھر بھی اُن کے آنے کی خبر پھیل گئی۔‏ ایک یونانی عورت جو اُس علاقے میں پیدا ہوئی تھی،‏ یسوع مسیح کے پاس آئی اور اُن سے اِلتجا کرنے لگی:‏ ”‏مالک!‏ داؤد کے بیٹے!‏ مجھ پر رحم کریں،‏ میری بیٹی کی حالت بہت خراب ہے کیونکہ اُس پر ایک بُرے فرشتے کا سایہ ہے۔‏“‏—‏متی 15:‏22؛‏ مرقس 7:‏26‏۔‏

لیکن یسوع مسیح نے اُسے کوئی جواب نہیں دیا۔‏ کچھ دیر بعد شاگردوں نے اُن سے کہا:‏ ”‏یہ عورت تو ہمارے پیچھے پڑ گئی ہے۔‏ اِس سے کہیں کہ یہاں سے چلی جائے۔‏“‏ اِس پر یسوع نے اُنہیں بتایا کہ وہ اِس عورت کو کیوں نظرانداز کر رہے ہیں۔‏ اُنہوں نے کہا:‏ ”‏خدا نے مجھے صرف اِسرائیل کے گھرانے کی کھوئی ہوئی بھیڑوں کے پاس بھیجا ہے،‏ کسی اَور کے پاس نہیں۔‏“‏ لیکن اُس عورت نے ہمت نہیں ہاری۔‏ وہ یسوع کے نزدیک آئی اور اُن کی تعظیم کر کے کہنے لگی:‏ ”‏مالک!‏ میری مدد کریں۔‏“‏—‏متی 15:‏23-‏25‏۔‏

یہودی دوسری قوم کے لوگوں سے تعصب برتتے تھے۔‏ اِس تعصب کی طرف اِشارہ کرتے ہوئے یسوع مسیح نے عورت سے کہا:‏ ”‏یہ مناسب نہیں کہ بچوں کی روٹی لے کر پِلّوں کے آگے ڈال دی جائے۔‏“‏ (‏متی 15:‏26‏)‏ کیا یسوع مسیح بھی تعصب کر رہے تھے؟‏ نہیں۔‏ اُنہوں نے لفظ ”‏کتّے“‏ کی بجائے ”‏پِلے“‏ اِستعمال کِیا جس سے ظاہر ہوا کہ وہ غیریہودیوں سے بھی پیار کرتے تھے۔‏ اِس کے علاوہ اُن کے چہرے کے تاثرات اور لہجے سے بھی اُن کی شفقت واضح تھی۔‏

عورت نے یسوع مسیح کی بات کا بُرا نہیں منایا بلکہ اُس نے اُن ہی بات کو لے کر کہا:‏ ”‏مالک،‏ آپ صحیح کہہ رہے ہیں لیکن یہ بھی تو سچ ہے کہ پِلے روٹی کے وہ ٹکڑے کھاتے ہیں جو اُن کے مالکوں کی میز سے گِرتے ہیں۔‏“‏ اُس کی بات سے متاثر ہو کر یسوع مسیح نے کہا:‏ ”‏بی‌بی،‏ آپ کا ایمان بہت مضبوط ہے۔‏ جیسا آپ چاہتی ہیں،‏ ویسا ہی ہو۔‏“‏ (‏متی 15:‏27،‏ 28‏)‏ اور بالکل ویسا ہی ہوا۔‏ جب وہ عورت اپنے گھر پہنچی تو اُس نے دیکھا کہ اُس کی بچی پلنگ پر لیٹی ہے اور صحیح سلامت ہے کیونکہ ”‏بُرا فرشتہ اُس میں سے نکل چُکا“‏ تھا۔‏—‏مرقس 7:‏30‏۔‏

فینیکے کے علاقے سے یسوع مسیح اور اُن کے شاگرد دریائےاُردن کی طرف گئے اور گلیل کی جھیل کے شمال میں اِسے پار کِیا۔‏ جب وہ دِکاپُلِس کے علاقے میں پہنچے تو وہ ایک پہاڑ پر گئے مگر وہاں بھی لوگوں نے اُنہیں ڈھونڈ لیا۔‏ یہ لوگ لنگڑوں،‏ اپاہجوں،‏ اندھوں اور گونگوں کو اپنے ساتھ لائے اور اُنہیں یسوع کے قدموں میں لِٹا دیا اور یسوع نے اُن سب کو ٹھیک کر دیا۔‏ جب لوگوں نے یہ دیکھا تو وہ بہت حیران ہوئے اور اِسرائیل کے خدا کی بڑائی کرنے لگے۔‏

اِس موقعے پر یسوع مسیح نے ایک آدمی کو خاص توجہ دی جو بہرا تھا اور تتلا کر بولتا تھا۔‏ ذرا سوچیں کہ یہ آدمی اِس بڑی بِھیڑ میں کتنا سہما ہوا ہوگا۔‏ ہو سکتا ہے کہ یسوع مسیح نے اُس کی گھبراہٹ محسوس کر لی تھی اِس لیے وہ اُسے لوگوں سے دُور ایک طرف لے گئے۔‏ پھر اُنہوں نے اِشاروں سے اُس کو بتایا کہ وہ کیا کرنے والے ہیں۔‏ اُنہوں نے اُس کے کانوں میں اُنگلیاں ڈالیں،‏ تھوکا اور اُس کی زبان کو چُھوا۔‏ اِس کے بعد اُنہوں نے آسمان کی طرف دیکھ کر گہری آہ بھری اور کہا:‏ ”‏کُھل جاؤ۔‏“‏ تب اُس آدمی کو سنائی دینے لگا اور وہ صاف صاف بولنے لگا۔‏ یسوع مسیح نہیں چاہتے تھے کہ اِس واقعے کا چرچا ہو۔‏ اُن کی خواہش تھی کہ لوگ سنی سنائی باتوں کی وجہ سے نہیں بلکہ اُن کے کاموں کو دیکھ کر اور اُن کی باتوں کو سُن کر اُن پر ایمان لائیں۔‏—‏مرقس 7:‏32-‏36‏۔‏

یسوع کے اِن معجزوں کو دیکھ کر لوگ بہت ہی حیران ہوئے اور کہنے لگے:‏ ”‏اِس آدمی کے کام بڑے زبردست ہیں۔‏ یہ تو بہروں کو سننے اور گونگوں کو بولنے تک کی صلاحیت عطا کرتا ہے۔‏“‏—‏مرقس 7:‏37‏۔‏