مواد فوراً دِکھائیں

مضامین کی فہرست فوراً دِکھائیں

 باب 134

یسوع مسیح زندہ ہو گئے!‏

یسوع مسیح زندہ ہو گئے!‏

متی 28:‏3-‏15 مرقس 16:‏5-‏8 لُوقا 24:‏4-‏12 یوحنا 20:‏2-‏18

  • یسوع مسیح کو زندہ کِیا گیا

  • یسوع مسیح کی قبر کے پاس ہونے والے واقعات

  • یسوع مسیح بہت سی عورتوں کو دِکھائی دیے

جب عورتوں نے دیکھا کہ یسوع مسیح کی قبر خالی ہے تو وہ بہت پریشان ہوئیں۔‏ مریم مگدلینی ”‏بھاگی بھاگی شمعون پطرس اور اُس شاگرد کے پاس گئیں جو یسوع کو بہت عزیز تھا“‏ یعنی یوحنا رسول کے پاس۔‏ (‏یوحنا 20:‏2‏)‏ اِس دوران باقی عورتیں قبر پر رہیں۔‏ اچانک اُنہیں ایک فرشتہ دِکھائی دیا۔‏ قبر کے اندر بھی ایک فرشتہ تھا ”‏جس نے سفید چوغہ پہنا ہوا“‏ تھا۔‏—‏مرقس 16:‏5‏۔‏

اُن میں سے ایک فرشتے نے عورتوں سے کہا:‏ ”‏ڈریں مت کیونکہ مَیں جانتا ہوں کہ آپ یسوع کو ڈھونڈ رہی ہیں جنہیں سُولی دی گئی تھی۔‏ وہ یہاں نہیں ہیں۔‏ جیسے کہ اُنہوں نے کہا تھا،‏ وہ زندہ ہو چکے ہیں۔‏ آئیں،‏ مَیں آپ کو وہ جگہ دِکھاؤں جہاں اُنہیں رکھا گیا تھا۔‏ پھر جا کر اُن کے شاگردوں کو بتائیں کہ ”‏یسوع کو مُردوں میں سے زندہ کر دیا گیا ہے۔‏ وہ آپ سے پہلے گلیل جا رہے ہیں۔‏“‏“‏ (‏متی 28:‏5-‏7‏)‏ وہ عورتیں ”‏خوف اور خوشی کے مارے“‏ شاگردوں کو یہ خبر دینے کے لیے بھاگیں۔‏—‏متی 28:‏8‏۔‏

اِتنے میں مریم پطرس اور یوحنا کے پاس پہنچ گئیں۔‏ مریم نے اُنہیں بتایا:‏ ”‏وہ مالک کو قبر سے لے گئے ہیں اور ہمیں نہیں پتہ کہ اُن کو کہاں رکھا گیا ہے۔‏“‏ (‏یوحنا 20:‏2‏)‏ یہ سُن کر پطرس اور یوحنا قبر کی طرف بھاگنے لگے۔‏ چونکہ یوحنا زیادہ تیز دوڑ رہے تھے اِس لیے وہ پہلے قبر پر پہنچ گئے لیکن وہ اندر نہیں گئے۔‏ جب اُنہوں نے جھک کر قبر کے اندر دیکھا تو وہاں لینن کی پٹیاں پڑی تھیں۔‏

پھر پطرس قبر پر پہنچ گئے اور سیدھا اندر چلے گئے۔‏ اُنہوں نے لینن کی پٹیوں اور اُس کپڑے کو دیکھا جو یسوع کے سر پر لپیٹا گیا تھا۔‏ اِس کے بعد یوحنا بھی قبر کے اندر گئے اور اُنہیں مریم کی بات پر یقین آ گیا۔‏ لیکن وہ دونوں یہ نہیں سمجھ پائے کہ یسوع مسیح زندہ ہو گئے ہیں حالانکہ یسوع اپنی موت سے پہلے اُنہیں یہ بات بتا چُکے تھے۔‏ (‏متی 16:‏21‏)‏ لہٰذا وہ حیران پریشان ہو کر اپنے اپنے گھر چلے گئے۔‏ مگر مریم جو قبر پر لوٹ آئی تھیں،‏ وہیں رہیں۔‏

اِس دوران باقی عورتیں شاگردوں کو یہ خوش‌خبری سنانے جا رہی تھیں کہ یسوع  مسیح کو زندہ کر دیا گیا ہے۔‏ راستے میں یسوع اُن سے ملے اور کہا:‏ ”‏سلام!‏“‏ اِس پر وہ عورتیں ”‏اُن کے قدموں پر گِر گئیں اور اُن کی تعظیم کرنے لگیں۔‏“‏ یسوع نے اُن سے کہا:‏ ”‏ڈریں مت۔‏ جائیں،‏ جا کر میرے بھائیوں کو یہ سب کچھ بتائیں تاکہ وہ گلیل جائیں جہاں وہ مجھے دیکھیں گے۔‏“‏—‏متی 28:‏9،‏ 10‏۔‏

اُسی دن سورج نکلنے سے پہلے ایک زلزلہ آیا تھا اور دو فرشتے آسمان سے اُترے تھے۔‏ جب یسوع کی قبر کے پاس کھڑے پہرےداروں نے اُنہیں دیکھا تو وہ ’‏ڈر کے مارے کانپنے لگے اور اُن کی حالت مرنے والی ہو گئی۔‏‘‏ تھوڑی دیر بعد جب پہرےدار سنبھلے تو وہ یروشلیم گئے اور ”‏سارا ماجرا اعلیٰ کاہنوں کو سنایا۔‏“‏ پھر اعلیٰ کاہنوں اور بزرگوں نے اِس معاملے کو دبانے کے لیے صلاح مشورہ کِیا۔‏ اُنہوں نے پہرےداروں کو رشوت دینے کا فیصلہ کِیا تاکہ وہ لوگوں کو بتائیں:‏ ”‏رات کو جب ہم سو رہے تھے تو اُس کے شاگرد اُس کی لاش چوری کر کے لے گئے۔‏“‏—‏متی 28:‏4،‏ 11،‏ 13‏۔‏

رومی قانون کے مطابق ایسے پہرےداروں کو سزائےموت دی جا سکتی تھی جو پہرا دیتے وقت سو جاتے تھے۔‏ اِس لیے کاہنوں نے پہرےداروں سے وعدہ کِیا کہ ”‏اگر یہ بات کسی طرح حاکم کے کانوں تک پہنچ گئی تو فکر نہ کرنا؛‏ ہم اُسے سمجھا لیں گے۔‏“‏ (‏متی 28:‏14‏)‏ پہرےداروں نے رشوت لے لی اور بالکل ویسا ہی کِیا جیسا کاہنوں نے اُن سے کہا تھا۔‏ یوں یہ جھوٹ یہودیوں میں پھیل گیا کہ یسوع کے شاگردوں نے اُن کی لاش کو چُرا لیا۔‏

مریم مگدلینی،‏ یسوع مسیح کی قبر کے پاس کھڑی رو رہی تھیں۔‏ روتے روتے اُنہوں نے جھک کر قبر کے اندر دیکھا۔‏ وہاں اُن کو دو فرشتے دِکھائی دیے جنہوں نے سفید کپڑے پہنے تھے۔‏ وہ اُس جگہ بیٹھے تھے جہاں یسوع کی لاش کو رکھا گیا تھا،‏ ایک سر کی طرف اور ایک پاؤں کی طرف۔‏ اُنہوں نے مریم سے پوچھا:‏ ”‏بی‌بی،‏ آپ کیوں رو رہی ہیں؟‏“‏ مریم نے کہا:‏ ”‏وہ میرے مالک کو لے گئے ہیں اور مجھے نہیں پتہ کہ اب اُن کو کہاں رکھا گیا ہے۔‏“‏ پھر مریم نے مُڑ کر پیچھے دیکھا کیونکہ وہاں کوئی کھڑا تھا۔‏ اِس آدمی نے بھی مریم سے پوچھا:‏ ”‏بی‌بی،‏ آپ کیوں رو رہی ہیں؟‏ آپ کس کو ڈھونڈ رہی ہیں؟‏“‏ مریم کو لگا کہ وہ آدمی مالی ہے اِس لیے اُنہوں نے کہا:‏ ”‏بھائی،‏ اگر آپ نے اُن کی لاش کو کہیں رکھا ہے تو بتائیں کہ کہاں رکھا ہے تاکہ مَیں اِسے لے جاؤں۔‏“‏—‏یوحنا 20:‏13-‏15‏۔‏

مریم یہ نہیں پہچان پائیں کہ اصل میں وہ یسوع مسیح سے بات کر رہی تھیں جو زندہ ہو گئے تھے۔‏ مگر جب یسوع نے اُن سے کہا:‏ ”‏مریم!‏“‏ تو وہ اُن کے شفیق انداز سے اُنہیں پہچان گئیں۔‏ مریم نے خوش ہو کر کہا:‏ ”‏ربونی!‏“‏ (‏جس کا مطلب ہے:‏ اُستاد۔‏)‏ پھر اُنہوں نے یسوع مسیح کو پکڑ لیا کیونکہ اُنہیں ڈر تھا کہ کہیں یسوع آسمان پر نہ چلے جائیں۔‏ مگر یسوع نے اُن سے کہا:‏ ”‏مجھے پکڑ کر نہ رکھیں۔‏ ابھی تو مَیں باپ کے پاس نہیں گیا۔‏ لیکن میرے بھائیوں کے پاس جائیں اور اُنہیں بتائیں کہ ”‏مَیں اپنے اور آپ کے باپ اور اپنے اور آپ کے خدا کے پاس جا رہا ہوں۔‏“‏“‏—‏یوحنا 20:‏16،‏ 17‏۔‏

مریم جلدی سے اُس جگہ گئیں جہاں رسول اور باقی شاگرد جمع تھے اور کہا:‏ ”‏مَیں نے مالک کو دیکھا ہے۔‏“‏ (‏یوحنا 20:‏18‏)‏ یہی بات شاگرد باقی عورتوں سے بھی سُن چُکے تھے مگر اُن کو اِن عورتوں کی ”‏باتیں بڑی احمقانہ لگیں۔‏“‏—‏لُوقا 24:‏11‏۔‏