مواد فوراً دِکھائیں

مضامین کی فہرست فوراً دِکھائیں

 باب نمبر ۱۶

زندگی میں سب سے اہم بات کیا ہے؟‏

زندگی میں سب سے اہم بات کیا ہے؟‏

یہ آدمی یسوع مسیح کے پاس کیوں آیا تھا؟‏

ایک بار ایک آدمی یسوع مسیح سے ملنے کے لئے آیا۔‏ وہ جانتا تھا کہ یسوع مسیح بہت سمجھ‌دار ہیں۔‏ اِس لئے اُس نے یسوع مسیح سے کہا:‏ ”‏میرے بھائی سے کہیں کہ وہ اپنی چیزوں میں سے مجھے بھی کچھ دے۔‏“‏ اُس آدمی کا خیال تھا کہ اُسے اپنے بھائی کی چیزوں میں سے کچھ چیزیں ملنی چاہئیں۔‏

اگر آپ یسوع مسیح کی جگہ ہوتے تو آپ اُس آدمی سے کیا کہتے؟‏ .‏.‏.‏.‏.‏.‏ یسوع مسیح جانتے تھے کہ اُس آدمی کی سوچ غلط ہے۔‏ اُس آدمی کا خیال تھا کہ بہت سی چیزیں حاصل کرنا اہم ہے۔‏ وہ یہ نہیں جانتا تھا کہ زندگی میں کون سی باتیں زیادہ اہم ہیں۔‏

آپ کے خیال میں ہماری زندگی میں کون سی بات سب سے اہم ہونی چاہئے؟‏ کیا اچھےاچھے کھلونے اور نئےنئے کپڑے خریدنا سب سے اہم بات ہے؟‏ .‏.‏.‏.‏.‏.‏ یسوع مسیح نے اُس آدمی کو بتایا کہ اُسے زندگی میں کس بات کو زیادہ اہمیت دینی چاہئے۔‏ اِس سلسلے میں اُنہوں نے ایک امیر آدمی کی کہانی سنائی جو اِتنا مصروف تھا کہ وہ خدا کو بھول گیا تھا۔‏ کیا آپ یہ کہانی سننا چاہتے ہیں؟‏ .‏.‏.‏.‏.‏.‏

اُس امیر آدمی کی بہت سی زمینیں تھیں۔‏ ایک بار اُس کی بہت ہی اچھی فصل ہوئی۔‏ فصل سے اِتنا اناج حاصل ہوا کہ اُس کے گوداموں میں اناج رکھنے کی جگہ نہیں رہی۔‏ اِس لئے اُس نے سوچا:‏ ”‏مَیں اپنے گوداموں کو گِرا دوں گا اور اِن سے بڑے گودام بناؤں گا۔‏ پھر مَیں اِن نئے گوداموں میں اپنا سارا اناج اور مال رکھوں گا۔‏“‏

امیر آدمی نے سوچا کہ وہ بڑا سمجھ‌دار ہے۔‏ اُس نے خود سے کہا:‏ ”‏میرے پاس بہت سی اچھی‌اچھی چیزیں ہیں۔‏ مجھے کئی سال  تک کام نہیں کرنا پڑے گا۔‏ اب مَیں کھا پی سکتا ہوں اور خوب مزے کر سکتا ہوں۔‏“‏ لیکن اُس کی سوچ غلط تھی۔‏ کیا آپ جانتے ہیں کہ اُس کی سوچ کیوں غلط تھی؟‏ .‏.‏.‏.‏.‏.‏ امیر آدمی کو بس اپنی فکر تھی۔‏ وہ صرف اپنے فائدے کا سوچ رہا تھا۔‏ وہ خدا کو بھول گیا تھا۔‏

یہ امیر آدمی کیا سوچ رہا ہے؟‏

خدا نے اُس امیر آدمی سے کہا:‏ ”‏بےوقوف آدمی،‏ آج رات کو تُم مر جاؤ گے۔‏ پھر اُن چیزوں کا کیا فائدہ ہوگا جو تُم نے جمع کی ہیں؟‏“‏ آپ کے خیال میں کیا اُس آدمی کو مرنے کے بعد اپنی چیزوں سے کوئی فائدہ حاصل ہوتا؟‏ .‏.‏.‏.‏.‏.‏ اُسے اِن چیزوں سے کوئی فائدہ حاصل نہیں ہوتا۔‏ اُس کی ساری چیزیں کسی اَور کو مل جاتیں۔‏ کہانی سنانے کے بعد یسوع مسیح نے کہا:‏ ”‏اُس شخص کا بھی یہی حال ہوگا جو اپنے لئے خزانہ جمع کرتا ہے اور خدا کے نزدیک دولت‌مند نہیں۔‏“‏—‏لوقا ۱۲:‏۱۳-‏۲۱‏۔‏

کیا آپ اُس امیر آدمی کی طرح ہونا چاہتے ہیں؟‏ .‏.‏.‏.‏.‏.‏ وہ اُن چیزوں سے خوش نہیں تھا جو اُس کے پاس تھیں۔‏ وہ اَور بھی چیزیں اور بہت سا پیسہ جمع کرنا چاہتا تھا۔‏ لیکن وہ ”‏خدا کے نزدیک دولت‌مند“‏ نہیں تھا۔‏

بہت سارے لوگ اُس امیر آدمی کی طرح ہیں۔‏ وہ اُن چیزوں سے خوش نہیں ہیں جو اُن کے پاس ہیں۔‏  وہ اَور بھی چیزیں حاصل کرنا چاہتے ہیں۔‏ آئیں،‏ مَیں آپ کو ایک مثال دیتا ہوں۔‏ کیا آپ کے پاس کھلونے ہیں؟‏ .‏.‏.‏.‏.‏.‏ آپ کے پاس کون‌کون سے کھلونے ہیں؟‏ .‏.‏.‏.‏.‏.‏ اگر آپ کے دوست کے پاس ایک ایسا گیند یا ایک ایسی گڑیا ہے جو آپ کے پاس نہیں ہے تو آپ کیا کریں گے؟‏ کیا آپ ضد کریں گے تاکہ آپ کے امی‌ابو آپ کو بھی وہ گیند یا گڑیا خرید کر دیں؟‏ کیا ایسا کرنا اچھی بات ہوگی؟‏ .‏.‏.‏.‏.‏.‏

کبھی‌کبھی ایک کھلونا آپ کو اِتنا اچھا لگتا ہے کہ آپ اِسے ہر حال میں حاصل کرنا چاہتے ہیں۔‏ آپ اِس کھلونے کو بہت ہی اہم خیال کرتے ہیں۔‏ لیکن جب یہ کھلونا آپ کو مل جاتا ہے تو کیا ہوتا ہے؟‏ .‏.‏.‏.‏.‏.‏ آپ کچھ دن اِس کے ساتھ کھیلتے ہیں۔‏ پھر یہ کھلونا پُرانا ہو جاتا ہے یا ٹوٹ جاتا ہے اور آپ اِسے پھینک دیتے ہیں۔‏ اِس سے پتہ چلتا ہے کہ ہمیں چیزوں کو زیادہ اہمیت نہیں دینی چاہئے۔‏ لیکن آپ کے پاس ایک ایسی چیز ہے جو کھلونوں سے بھی زیادہ اہم ہے۔‏ کیا آپ جانتے ہیں کہ یہ کیا ہے؟‏ .‏.‏.‏.‏.‏.‏

آپ کے پاس کون سی چیز ہے جو کھلونوں سے بھی زیادہ اہم ہے؟‏

آپ کے پاس زندگی ہے۔‏ اگر آپ کے پاس زندگی نہ ہوتی تو آپ کچھ بھی نہ کر سکتے۔‏ کیا آپ کو یاد ہے کہ کس نے ہمیں زندگی دی ہے؟‏ .‏.‏.‏.‏.‏.‏ یہوواہ خدا نے ہمیں زندگی دی ہے۔‏ اِس لئے ہمیں ایسے کام کرنے چاہئیں جن سے وہ خوش ہوتا ہے۔‏ ہمیں اُس امیر آدمی کی طرح نہیں ہونا چاہئے۔‏ ہمیں اپنے کاموں میں اِتنا مگن نہیں ہونا چاہئے کہ ہم خدا کو بھول جائیں۔‏

 لیکن کیا صرف بچے زیادہ چیزیں حاصل کرنا چاہتے ہیں؟‏ نہیں۔‏ بہت سے بڑے بھی اُن چیزوں سے خوش نہیں ہیں جو اُن کے پاس ہیں۔‏ اُن کے پاس کھانے کو ہوتا ہے،‏ پہننے کو ہوتا ہے اور رہنے کے لئے گھر بھی ہوتا ہے۔‏ لیکن وہ اِن چیزوں سے خوش نہیں ہوتے۔‏ وہ اَور زیادہ کپڑے حاصل کرنا چاہتے ہیں۔‏ وہ چاہتے ہیں کہ اُن کے پاس بہت بڑا گھر ہو۔‏ اِن چیزوں کو خریدنے کے لئے پیسوں کی ضرورت ہوتی ہے۔‏ اِس لئے وہ بہت سے پیسے کمانے کے لئے دن‌رات کام کرتے ہیں۔‏ اور جب اُن کے پاس بہت سے پیسے ہو جاتے ہیں تو وہ اَور بھی پیسے کمانا چاہتے ہیں۔‏

کچھ لوگ پیسے کمانے میں اِتنے مصروف ہو جاتے ہیں کہ اُن کے پاس اپنے گھر والوں کے لئے وقت نہیں ہوتا۔‏ اور اُن کے پاس خدا کے لئے بھی وقت نہیں ہوتا۔‏ لیکن ذرا سوچیں کہ کیا اِن لوگوں کے پیسے اُن کو ہمیشہ تک زندہ رکھ سکتے ہیں؟‏ .‏.‏.‏.‏.‏.‏ یہ لوگ بھی مر جاتے ہیں۔‏ کیا مرنے کے بعد اُن کے پیسے اُن کے کام آتے ہیں؟‏ آپ کا کیا خیال ہے؟‏ .‏.‏.‏.‏.‏.‏ اُن کے پیسے اُن کے کسی کام نہیں آتے کیونکہ بائبل میں لکھا ہے کہ مُردے کچھ بھی نہیں کر سکتے۔‏—‏واعظ ۹:‏۵،‏ ۱۰‏۔‏

تو پھر کیا پیسے کمانا غلط ہے؟‏ .‏.‏.‏.‏.‏.‏ پیسے کمانا غلط نہیں ہے۔‏ بائبل میں لکھا ہے کہ پیسے ایک حد تک فائدہ‌مند ہوتے ہیں۔‏ (‏واعظ ۷:‏۱۲‏)‏ پیسوں سے ہم کھانےپینے کی چیزیں اور کپڑے خرید سکتے ہیں۔‏ لیکن پیسوں سے محبت کرنا غلط ہے۔‏ جو لوگ پیسوں سے محبت کرتے ہیں،‏ وہ اُس امیر آدمی کی طرح ہیں جس نے اپنے لئے بہت سی چیزیں جمع کی تھیں لیکن وہ خدا کے نزدیک دولت‌مند نہیں تھا۔‏

آپ کے خیال میں خدا کے نزدیک دولت‌مند ہونے کا کیا مطلب ہے؟‏ .‏.‏.‏.‏.‏.‏ اِس کا مطلب ہے کہ ہمیں خدا کو اپنی زندگی میں سب سے اہم خیال کرنا چاہئے۔‏ کچھ لوگ کہتے ہیں کہ وہ خدا پر ایمان رکھتے ہیں۔‏ اُن کے خیال میں خدا پر ایمان رکھنا کافی ہوتا ہے۔‏ لیکن کیا یہ لوگ خدا کے نزدیک دولت‌مند ہیں؟‏ آپ کا کیا خیال ہے؟‏ .‏.‏.‏.‏.‏.‏ وہ خدا کے نزدیک دولت‌مند نہیں ہیں بلکہ وہ اُس امیر آدمی کی طرح ہیں جو خدا کو بھول گیا تھا۔‏

یسوع مسیح اپنے آسمانی باپ کو کبھی نہیں بھولے۔‏ وہ اُن چیزوں سے خوش تھے جو اُن کے پاس تھیں۔‏ اُنہوں نے بہت زیادہ پیسے کمانے کی کوشش نہیں کی۔‏ اُنہوں نے بہت زیادہ چیزیں بھی جمع نہیں کیں۔‏ یسوع مسیح جانتے تھے کہ کون سی بات زندگی میں سب سے زیادہ اہم ہے۔‏ کیا آپ جانتے ہیں کہ کون سی بات سب سے اہم ہے؟‏ .‏.‏.‏.‏.‏.‏ خدا کے نزدیک دولت‌مند ہونا سب سے اہم ہے۔‏

یہ لڑکی کون سے اہم کام کر رہی ہے؟‏

ہم خدا کے نزدیک دولت‌مند کیسے ہو سکتے ہیں؟‏ .‏.‏.‏.‏.‏.‏ جب ہم ایسے کام کرتے ہیں جو خدا کو پسند ہیں تو ہم  خدا کے نزدیک دولت‌مند بنتے ہیں۔‏ یسوع مسیح نے کہا:‏ ”‏مَیں ہمیشہ وہی کام کرتا ہوں جو خدا کو پسند آتے ہیں۔‏“‏ (‏یوحنا ۸:‏۲۹‏)‏ جب ہم ایسے کام کرتے ہیں جو خدا کو پسند ہیں تو وہ خوش ہوتا ہے۔‏ آپ خدا کو خوش کرنے کے لئے کون سے کام کر سکتے ہیں؟‏ .‏.‏.‏.‏.‏.‏ آپ بائبل پڑھ سکتے ہیں،‏ مذہبی اجلاسوں پر جا سکتے ہیں،‏ خدا سے دُعا کر سکتے ہیں اور دوسروں کو خدا کے بارے میں سکھا سکتے ہیں۔‏ یہی باتیں زندگی میں سب سے زیادہ اہمیت رکھتی ہیں۔‏

یسوع مسیح خدا کے نزدیک دولت‌مند تھے اِس لئے خدا نے اُن کی مدد کی۔‏ یہوواہ خدا نے یسوع مسیح کو انعام کے طور پر ہمیشہ کی زندگی دی۔‏ اگر ہم بھی یسوع مسیح کی طرح بنیں گے تو یہوواہ خدا ہم سے پیار کرے گا اور ہماری بھی مدد کرے گا۔‏ اِس لئے آئیں،‏ یسوع مسیح کی طرح خدا کے نزدیک دولت‌مند بنیں۔‏ ہمیں کبھی اُس امیر آدمی کی طرح نہیں ہونا چاہئے جو خدا کو بھول گیا تھا۔‏

ہمیں اُن چیزوں سے خوش کیوں رہنا چاہئے جو ہمارے پاس ہیں؟‏ اِس سلسلے میں اِن آیتوں کو پڑھیں:‏ امثال ۲۳:‏۴؛‏ امثال ۲۸:‏۲۰؛‏ ۱-‏تیمتھیس ۶:‏۶-‏۱۰‏؛‏ اور عبرانیوں ۱۳:‏۵‏۔‏