مواد فوراً دِکھائیں

مضامین کی فہرست فوراً دِکھائیں

 سبق 12

موت پر کیا واقع ہوتا ہے؟‏

موت پر کیا واقع ہوتا ہے؟‏

موت زندگی کی ضد ہے۔‏ موت گہری نیند کی مانند ہے۔‏ (‏یوحنا 11:‏11-‏14‏)‏ مُردے سننے،‏ دیکھنے،‏ بولنے یا سوچنے کے قابل نہیں ہوتے۔‏ (‏واعظ 9:‏5،‏ 10‏)‏ جھوٹا مذہب یہ تعلیم دیتا ہے کہ مُردے اپنے آباؤاجداد کے ساتھ رہنے کیلئے عالمِ‌ارواح میں چلے جاتے ہیں۔‏ تاہم بائبل یہ تعلیم نہیں دیتی۔‏

جو لوگ مر چکے ہیں وہ نہ تو ہماری مدد کر سکتے ہیں اور نہ ہی ہمیں نقصان پہنچا سکتے ہیں۔‏ لوگ عام طور پر ایسی رسومات اور قربانیاں پیش کرتے ہیں جو اُن کے خیال میں مُردوں کو خوش کریں گی۔‏ یہ خدا کی نظر میں ناپسندیدہ ہے کیونکہ یہ شیطان کے ایک جھوٹ پر مبنی ہے۔‏ یہ مُردوں کو بھی خوش نہیں کر سکتیں کیونکہ اُن میں زندگی نہیں ہوتی۔‏ ہمیں مُردوں سے نہ تو ڈرنا چاہئے اور نہ ہی اُن کی پرستش کرنی چاہئے۔‏ ہمیں صرف خدا کی پرستش کرنی چاہئے۔‏—‏متی 4:‏10‏۔‏

مُردے پھر زندہ ہونگے۔‏ یہوواہ مُردوں کو فردوسی زمین پر زندہ کرے گا۔‏ یہ مستقبل میں ہوگا۔‏ (‏یوحنا 5:‏28،‏ 29؛‏ اعمال 24:‏15‏)‏ خدا مُردوں کو بالکل ویسے ہی زندہ کر سکتا ہے جیسے آپ کسی سوئے ہوئے شخص کو نیند سے جگا سکتے ہیں۔‏—‏مرقس 5:‏22،‏ 23،‏ 41،‏ 42‏۔‏

یہ خیال کہ ہم مرتے نہیں شیطان اِبلیس کا پھیلایا ہؤا جھوٹ ہے۔‏ شیطان اور اُس کے شیاطین لوگوں کو اِس سوچ میں مبتلا کر دیتے ہیں کہ مُردوں کی روحیں زندہ ہیں اور وہ بیماری اور دیگر مسائل کا سبب بنتی ہیں۔‏ شیطان بعض‌اوقات خوابوں اور رویتوں کے ذریعے لوگوں کو دھوکا دیتا ہے۔‏ خدا مُردوں سے رابطہ قائم کرنے کی کوشش کرنے والے لوگوں کی مذمت کرتا ہے۔‏—‏استثنا 18:‏10-‏12‏۔‏