مواد فوراً دِکھائیں

مضامین کی فہرست فوراً دِکھائیں

 پاک کلام سے سنہری باتیں | یرمیاہ 51،‏ 52

یہوواہ خدا کی ہر بات سچی ثابت ہوتی ہے

یہوواہ خدا کی ہر بات سچی ثابت ہوتی ہے

یہوواہ خدا نے مستقبل کے بارے میں بالکل صحیح پیش‌گوئی کی

فارس کے شاہی دستے کا ایک تیرانداز

‏”‏تیروں کو صیقل کر“‏

51:‏11،‏ 28

  • مادی اور فارسی لوگ بڑے ماہر تیرانداز تھے اور عموماً تیر کمان کو ہتھیار کے طور پر اِستعمال کرتے تھے۔‏ اُنہوں نے اپنے تیروں کو ”‏صیقل“‏ یعنی صاف کر کے تیز کِیا تاکہ دُشمن کو زیادہ گہرے زخم لگیں۔‏

‏”‏بابلؔ کے بہادر لڑائی سے دست‌بردار .‏ .‏ .‏ بیٹھے ہیں“‏

51:‏30

  • تاریخِ‌نبوندیس کے مطابق ”‏خورس کی فوج بغیر لڑائی کے بابل میں داخل ہو گئی۔‏“‏ یوں یرمیاہ نبی کی پیش‌گوئی بالکل سچ ثابت ہوئی۔‏

تاریخِ‌نبوندیس

‏’‏بابلؔ کھنڈر ہو جائے گا اور ہمیشہ ویران رہے گا‘‏

51:‏37،‏ 62

  • سن 539 قبل‌ازمسیح (‏ق‌م)‏ سے بابل کی شان‌وشوکت کم ہونے لگی۔‏ سکندرِاعظم بابل کو اپنا دارالحکومت بنانا چاہتے تھے لیکن اچانک اُن کی موت ہو گئی۔‏ پہلی صدی عیسوی میں پطرس رسول بابل گئے کیونکہ کچھ یہودی وہاں رہتے تھے۔‏ لیکن چوتھی صدی عیسوی تک یہ شہر کھنڈر بن گیا اور آخرکار اِس کا نام‌ونشان مٹ گیا۔‏

پاک کلام کی پیش‌گوئیوں کی تکمیل کا مجھ پر کیا اثر ہوتا ہے؟‏

 

مَیں دوسروں کو اِس پیش‌گوئی کے بارے میں کیا سکھا سکتا ہوں؟‏